Archive | poetry RSS feed for this section

Jan lo keh tum sab qaatil ho

18 Jan


جان لو کہ تم سب قاتل ہو
جہنمی گروھ باطل ہو

ہر وقت ہر مسلک کے، کیڑے نکالتے رہتے ہو
اسلام سے مسلمانوں کو، خارج کراتے رہتے ہو
کبھی ‘ان’ کو بھی روک کے پوچھا ہے؟
کیوں بیجرم خون بہاتے رہتے ہو؟

قاتلو میں تم بھی شامل ہو
اس گندی سوچ کے حامل ہو
جہالت خود جس سے پناہ مانگے
ایسے  تکفیری جاہل ہو

جان لو کہ تم سب قاتل ہو

تمہاری ستاروں والی وردی میں، اس قوم کے خون کی زردی ہے
الٹی سیدھی تدبیروں نے، کیا ملک کی حالت کر دی ہے
ایسی تو نہیں پھر کہتے سب
دہشتگردی کے پیچھے وردی ہے

یہ کاٹنے والے کتے سب، تمہارے ہی تو پالے ہیں
بھرے بریف کیسوں کی خاطر، تمھاری آنکہ کے تارے ہیں
لگام ڈالو ان کو تم ورنہ
حسسینی اب ڈالنے والے ہیں

ظالمو کو ساتھ ملا کر تم، مجرم ہو مظلوموں کے
کیا نظر اتے نہیں تم کو لاشے، اپنے ہی جوانوں کے؟
تمہارے ہی اندر گھسے سب قاتل
بلوچوں ، ہزارہ کے، پشتونوں کے

جان لو کہ تم سب قاتل ہو

پیپی  کے تم جیالے ہو
کالے کرتوتوں والے ہو
تمہاری نسل پرستی بھی ملاوٹی ہے
منافق کمینے سالے ہو

وہ قاتل اب بھی زندہ ہیں
اسی سرکار میں تابندہ ہیں
انھیں بغلوں میں گھسا کے پھر
کہتے ہو ہم شرمندہ ہیں؟

جان لو کہ تم سب قاتل ہو

تم منصف نہیں قصاب ہو
اس دھرتی پہ الله کا عذاب ہو
انصاف کا ڈھونگ سب جھوٹا ہے
تمہی تو دجال ہو، کذاب  و

قاتلوں کو چھوڑنے کے، بناتے تم بہانے ہو
اندر ہی اندر تم بھی سب ، جانتے سب ٹھکانے ہو
بےشرم پھر کھل کے کہ دو اب
کہ تم آنکھوں سے  کانے ہو

جان لو کہ تم سب قاتل ہو

کیوں اپنے گریبان میں، جھانکنے سے کتراتے ہو
قاتلوں کا نام تم لینے میں، اتنا کیوں گھبراتے ہو
کیا تمہارے گھر سب محفوظ ہیں؟
کیا اسی لیے شرماتے ہو؟

اے اس قوم کے سوتے لوگو، تم بھی مجرم ہو
زرہ دل میں جھانک کے سوچو، تم بھی مجرم ہو
اس دور کے یزیدیوں کے خلاف
جب تک کھل کے نہ بولو، تم بھی مجرم ہو

جان لو کہ تم سب قاتل ہو

Advertisements

10th Muharram!

19 Dec

Blood on cheeks
Six months in the hand
Sacrifice of peeks
Pouring the hot sand

The delicate gem torn in peices
No craft man can rebuild
Horses participating in wild races
Each thinking he killed

Solid rock like stone
Water has played its game
Hurting The Man’s backbone
While thirst remains the same

Master piece of eighteen years
It all went for goal
Leaving nothing but tears
Pain for pure soul

Alone in the whole field
Still unacceptable is, defeat
A call comes to yeild
‘O’ satisfactory soul, retreat

Victory shall be thou
Promise will be fulfilled
Its time to come to bow
A prayer has to be build

Xain GardeXi

Baraan e Rehmat sai …

3 Jul

In chulbuli barsaton main
Mere ghar ki chat tapakti hai
Kuch ghabra sa main jata hun
Des main kahin pardes na ho jaun
Yehi dar khay jata hai
Chulha mushkil sai jalta hai
Lakri geeli rehti hai
Mere ghar ki chat peh Maula
Jaisai bijli abhi girti hai
Mano main phir dar dar phirta hun
Logon ki mintain karta hun
Nahin! Phir nahin!
Ab itna dil main taab nahin!
Mere ghar ki chat ab pehlay sai
Or ziada kachi hai!
Ab kashti main to pani main
Kabhi nahin chalata hun
Na bachpan mujh ko aata hai!
Kuch ghabra sa main jata hun

Baraan e Rehmat sai dar lagta hai!

Salam Akhir

11 Jan

This a very personnel poem I had written in 2008 after coming from Syria. It is dedicated to all the zaireen of Ahlubait a.s. May Allah give me another chance to go there and keep Syria safe. Ameen!

کچھ ساعتیں قبل آۓ تھے شام آخر

لو آج پھر ہو گیا سفر تمام آخر
لگتا ہے فرات رکا ہے سینے میں
کچھ ایسے گزرے ہیں ایام آخر
کچھ حسرتیں ہیں جو دل میں باقی ہیں
کہ نہیں ہو سکتا پیمانہ کبھی  تمام آخر
گو کہ نہیں معلوم لوح محفوظ کی تحریر
نہیں جی چاہتا کہوں بی بی  سلام آخر
اور ہمیں کاتب ے تقدیر سے کیا ابہام
کچھ تو ناد علی کا ملے گا انعام آخر
پھر دیں گے پرسا جتنی بساط ہو گی
دھتکار دنیا کو چلیں گے شام آخر
گر نہ دی مہلت سانسوں کے اختتام نے
چھوڑ آیئں گے خالی  قبر کا مقام آخر
اک سفر ہو گا محشر سے پہلے
ساتھ اپنے ہوں گے امام آخر
پھر بلاییے گا در تطہیر پہ آپ
کہ ہم بھی ہیں آپ کے غلام آخر
اچھا بی بی سلام کہ جانے کا وقت ہے
پر نہ یہ سلام ہے نہ ہی کلام آخر

Inspiration from Psalms 23

29 Oct

By Xain Gardezi

The Lord is my shepherd; I shall not want
The diamond flower bed or the silver plant
The castle of ruby or the land of gold
I need not my will, my soul is sold

Lantern in night shall be the book of light
The true path is so clear and bright
I shall move on; no matter if the road is harder
For I seek not my will but the will of the Father

I shall be tied to the door of Tatheer
Disturbs me not the voice of Israfeel
I shall rest along the remains of Khak-e-Shafa
Will keep smelling the scent of Karbala

I graze beside the Kausar of honey and milk
I need not worry about robes and curtains of silk
My body is not troubled by flu or fever
For I shall dwell in the house of Lord, for ever

Wanderer soul

4 Apr

Wanderer Soul

By Xain Gardexi

Wanderer soul where ye begin
Steaming desert thou is in
No water to quench thy thirst
No Ganges to wash thy sin

Destiny calls through barren land
Does not extend the gentle hand
See beyond the mist of clouds
It doesn’t end in drops of sand

But wonder may thy shelter be
Any bank when thou cross the sea
Obscure is the route ahead
Wary is thy troubled knee

Ruffling wind in the night blows
Eyes flicker for sign of rose
Tiring feet start trembling
Thirst bursts and walk slows

In the middle the traveller lies
No motel, no passer by
In haste comes the handsome guide
Soul cherishes and starts to fly

Green they are, the mountains high
Broaden smile and tears dry
Comfort is the circle wide
Rainbow shines in the rainy sky

Seven heavens thou shall ascend
That is where the journey ends
Not in waters of Zam Zam and Ganges
Thy faith is on what it all depends