Salam Akhir

11 Jan

This a very personnel poem I had written in 2008 after coming from Syria. It is dedicated to all the zaireen of Ahlubait a.s. May Allah give me another chance to go there and keep Syria safe. Ameen!

کچھ ساعتیں قبل آۓ تھے شام آخر

لو آج پھر ہو گیا سفر تمام آخر
لگتا ہے فرات رکا ہے سینے میں
کچھ ایسے گزرے ہیں ایام آخر
کچھ حسرتیں ہیں جو دل میں باقی ہیں
کہ نہیں ہو سکتا پیمانہ کبھی  تمام آخر
گو کہ نہیں معلوم لوح محفوظ کی تحریر
نہیں جی چاہتا کہوں بی بی  سلام آخر
اور ہمیں کاتب ے تقدیر سے کیا ابہام
کچھ تو ناد علی کا ملے گا انعام آخر
پھر دیں گے پرسا جتنی بساط ہو گی
دھتکار دنیا کو چلیں گے شام آخر
گر نہ دی مہلت سانسوں کے اختتام نے
چھوڑ آیئں گے خالی  قبر کا مقام آخر
اک سفر ہو گا محشر سے پہلے
ساتھ اپنے ہوں گے امام آخر
پھر بلاییے گا در تطہیر پہ آپ
کہ ہم بھی ہیں آپ کے غلام آخر
اچھا بی بی سلام کہ جانے کا وقت ہے
پر نہ یہ سلام ہے نہ ہی کلام آخر
Advertisements

2 Responses to “Salam Akhir”

  1. Asif rizvi June 17, 2011 at 7:43 am #

    Mashahallah bhai bahoot khoob kaha hai app ne wah

  2. Ali Nasir Dharejo June 11, 2013 at 8:10 pm #

    SALAAM AE SHAHZADI E KAUNAIN S.A

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: